Theme images by MichaelJay. Powered by Blogger.
Showing posts with label URDU. Show all posts
Showing posts with label URDU. Show all posts

Sunday, 29 March 2015

الطاف حسین کا ایک بار پھر ایم کیو ایم کی قیادت سے دستبردار ہونے کااعلان

Written by  



کراچی: ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین نے ایک بار پھر متحدہ کی قیادت سے دستبردار ہونے کا اعلان کرتے ہوے کہا کہ کارکنان کسی دوسرے رہنما کو اپنا قائد چن لیں۔
لندن سے براہ راست خطاب کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین کا کہنا تھا کہ کہ 40 سال سے گالیاں سن رہا ہوں لیکن اب میں گالیاں نہیں سنوں گا کیونکہ میں آج تحریک کی قیادت چھوڑرہا ہوں، کارکنان مجھ سے کنارہ کشی اختیار کرتے ہوئے ایک جگہ جمع ہوں اور  جس کو چاہیں پارٹی قائد منتخب کرلیں، قیادت چھوڑنے کا فیصلہ بہت سوچ سمجھ کر کیا، اب پارٹی قیادت کا مزید بوجھ نہیں اٹھاسکتا تاہم میری دعائیں آپ لوگوں کےساتھ رہیں گی، اللہ نے زندگی دی تواپنے چاہنے والوں سے مسلسل رابطے میں رہوں گا۔ ان کا کہنا تھا کہ اردو  بولنے والے طلبہ کے لیےاندرون سندھ میں تعلیم حاصل کرنامشکل ہوگیاتھا لہذا مجبوری کےتحت اپنی تنظیم بنانا پڑی لیکن اے پی ایم ایس او کے قیام کے بعد اخبارات میں تنقید کی گئی اور اس پر اوپرملک دشمنی کا الزام لگایا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ عامرخان کے لیے کہا گیا کہ یہ ہمارےمہمان ہیں لیکن  اگلے دن ان کومنہ پرکپڑاڈال کرعدالت لےجایاگیا، کیا مہمانوں کےساتھ ایساسلوک کیاجاتاہے اور کیا اداراوں کو مجرم صرف ایم کو ایم میں ہی نظر آتے ہیں۔
ایم کیو ایم کے قائد نے کہا کہ ٹاک شوزمیں میرےخلاف باتیں کی جائیں اورکوئی کچھ نہ بولے،کارکنان نےکبھی خودسےنوٹس نہیں لیا، یہ میرےلیےشرم کی بات ہے، کیا ہر معاملے کو میں ہی دیکھوں،میں اب اتنابوجھ نہیں اٹھاسکتا لہذا کارکنان سےدرخواست ہےکہ مجھےمیرےحال پرچھوڑدیں، کارکنان اور عہدیدار آج سے ایم کیو ایم کو ختم کریں اور تحریک کو ترک کرکے انسانیت کی خدمت کریں اور اپنی توانیاں فلاحی کاموں پر صرف کریں جس پر کارکنان نے الطاف حسین سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ کو پارٹی قیادت نہ چھوڑیں، آپ ہمارے قائد ہیں اگر آپ نہیں تو پارٹی اور تحریک کچھ بھی نہیں۔
ایم کیو ایم قائد نے عمران خان پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ میں قوم سے کتنا پیار کرتا ہوں یہ سب کومعلوم ہے، کارکنان کی خاطر25 سال سے جلاوطنی کاٹ رہا ہوں لیکن عمران خان مجھے کہتے ہیں کہ بزدل رہنما ڈر کر لندن بیٹھا ہے، عمران خان نے دھرنے میں کہا تھا کہ تبدیلی آنےتک گھرنہیں جاؤں گا لیکن شادی کے بعد ان کا انقلاب اور کنٹینردونوں غائب ہوگئے، عمران خان کو میرے 2 گھنٹے برے لگتے ہیں لیکن وہ بتائیں کہ میڈیا نے دھرنوں کی اتنی زیادہ کوریج کیوں کی، مجھ پرعمران فاروق اورعظیم طارق کےقتل کاالزام لگایا گیا، میں عمران فاروق کےقتل پررویا تو انہوں نےاس پربھی مذاق اڑایا، ہم پر یہ بھی الزام بھی لگایا گیا کہ پرویزمشرف نےایم کیوایم کاساتھ دیا اور ایم کیوایم اسٹیٹس کو کی پارٹی ہے تاہم انہوں نےمجھ پرجوبھی الزامات لگائےوہ جھوٹے ہیں،عمران خان کومیرےاورزرداری کے جمہوریت کے نام پرجمع ہونے پراعتراض ہے اگر ہم جمہوریت کےنام پرنہیں توکیا مارشل لاکےنام پرجمع ہوں۔

میکسیکو میں خاتون ٹیچر کو عشق لڑانے کی بھاری قیمت چکانا پڑ گئی

Written by  

میکسیکو میں خاتون ٹیچر کو عشق لڑانے کی بھاری قیمت چکانا پڑ گئی



میکسیکو سٹی: کہتے ہیں ہے محبت کے لیے عمر کی کوئی قید نہیں ہوتی لیکن اگر یہ محبت شادی کے بعد کسی سے ہو جائے تو پھر انجام پر بھی نظر ہونی چاہیے ایسا ہی کچھ  ہوا میکسیکو میں جہاں ایک خاتون ٹیچر کو شادی شدہ مرد سے محبت کی بھاری قیمت ادا کرنا پڑی اور وہ اس کی اپنے ہی شاگردوں کے سامنے درگت بن گئی۔
میکسیکو کے اسکول میں ملازمت کرنے والی خاتون ٹیچرمارسیلا کو اپنے کلاس کے ایک طالب علم کے والد سے محبت ہوگئی اور دونوں کے درمیان یہ محبت ملاقاتوں میں بدل گئی اورمزید پروان چڑھنے لگی لیکن ایک روز شوہر کے گھر دیر سے آنے پر بیوی لیلہ فلوریس کو شک ہوگیا اور جب اس کی تصدیق بھی ہوگئی تویہ خبر بیوی پربجلی بن کرگری بس پھر کیا تھا اس نے اپنے شوہر سے نمٹنے پہلے عورت سے نمٹنے کا فیصلہ کر لیا۔
لیلہٰ فلوریس موقع کی تلاش میں لگ گئی اور بالآخر ایک دن وہ اچانک عین اس وقت کلاس روم میں جا پہنچی جب وہ بچوں کو پڑھا رہی تھی اور لیلہ نے آؤ دیکھا نہ تاؤ اور ٹیچر پر مکوں اور گھونسوں کی برسات کردی اور کہیں کہیں لاتوں سے بھی کام لیا لیکن پھر بھی خاتون کے دل میں لگی آگ نہ بجھی تو وہ اس پر چڑھ کر بیٹھ گئی اور بالوں سے نوچ نوچ کر عورت کی ایسی پٹائی کی کہ اس پر سوار عشق کا بھوت ہی اتاردیا۔
خاتون ٹیچر کی پٹائی کا شاید یہ سلسلہ کچھ دیر اور چلتا لیکن اس دوران بہت سے شاگرد اور دیگر ٹیچر بھی جمع ہوگئے جنہیں دیکھ کر لیلہ نے وہاں سے رفو چکر ہونے میں ہی عافیت جانی۔ اسکول کی انتظامیہ نے واقعہ پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے اس کی تحقیقات کا حکم دے دیا ہے۔

فیس بک پر چیٹنگ کی اجازت نہ ملنے پر طالب علم نے خودکشی کرلی

Written by  


الہ آباد: بھارت میں فیس بک پر چیٹنگ کی اجازت نہ ملنے پر 9 ویں جماعت کے طالب علم نے گولی مار کر خود کشی کر لی۔
بھارتی میڈیا کےمطابق الہ آباد کے علاقے پارسا نگر کے رہائشی ودیاکانت شکلا نے اپنے  14 سالہ بیٹے  کو سماجی ویب سائٹ پر فیس بک پر چیٹنگ سے منع کیا جس پر لڑکے نے دلبرداشتہ ہو کر خود کو کمرے میں بند کرکے گولی مارلی، واقعے کے فوری بعد لڑکے کے اہل خانہ نے اسے اسپتال منتقل کیا جہاں ڈاکٹروں نے اس کی موت کی تصدیق کردی۔
واضح رہے کہ نو عمر بچوں میں سوشل میڈیا کے استعمال کے حوالے سے شدت پسندی کا رحجان دیکھنے میں آرہا ہے جہاں اس سے قبل امریکی ریاست کولاراڈو میں 12سالہ بچی نے ’’آئی فون‘‘ واپس لینے پراپنی ماں کو 2 بار قتل کرنے کی کوشش کی تھی۔